پیر, جولائی 16, 2018

بچوں کے ساتھ اللہ کے رسول ﷺ کا معاملہ کیسا ہوتا تھا ؟

اللہ کے رسول ﷺ ساری مخلوق کے لیے رحمت بناکر بھیجے گیے تھے، آپ کا معاملہ سماج کے ہر طبقہ کے ساتھ نہایت عمدہ ہوتا تھا، آپ افضل رسول تھے، آپ بہادر جرنیل تھے،  آپ بہترین شوہر تھے، آپ شفیق باپ تھے، یہاں تک کہ بچوں کے ساتھ بھی آپ کا معاملہ شفقت و رحمت اور مہربانی پر مبنی ہوتا تھا۔
آج  ہم آپ ﷺ کی سیرت طیبہ کے دریچے سے بچوں کے ساتھ آپ کے کریمانہ اخلاق کے چند نمونے پیش کر یں گے جن سے بچوں کے ساتھ آپ کی شفقت اور محبت کا بآسانی اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔
اپنے بیٹے ابراہیم کے ساتھ:
جب آپ ﷺ کے گھر ابراہیم کی پیدائش  ہوئی اور ابو رافع نے آکر آپ کو اس کی خبر دی تو آپ ﷺ نے خوشی سے اسے ایک غلام عنایت فرمایا۔ (الطبقات الكبرى  1 / 135 ) جب صبح ہوئی تو اللہ کے رسول ﷺ نے اپنے گھر آنے والے اس نئے مہمان کی صحابہ کرام کو بشارت دی، چنانچہ آپ ﷺ نے فرمایا:  ولد لي الليلة غلام فسميته باسم أبي إبراهيم (صحيح مسلم  4 / 1807 )   آج کی رات مجھے ایک لڑکا پیدا ہوا ہے میں نے اس کا نام اپنے باپ کے نام پر ابراہیم رکھا ہے۔
انس رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ ہم رسول اللہ ﷺ کےساتھ ابوسیف کے گھر گئے جو لوہاری کا پیشہ اختیار کرتے تھے اور ان کی بیوی ام سیف (عرب کی روایت کے مطابق) ابراہیم کو دودھ پلا رہی تھی، اللہ کے رسول ﷺ نے ابراہیم کو لیا اسے بوسہ دیا اور چوما۔ پھر دوسری مرتبہ ہم آپ کے ساتھ ابراہیم کے پاس گئے یہ وہ وقت تھا کہ حضرت ابراہیم جان کنی کے عالم میں تھے۔ یہ منظر دیکھ کر رحمتِ عالم ﷺ کی آنکھوں سے آنسو جاری ہوگئے۔
اس وقت عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ عنہ نے عرض کیا کہ یارسول اﷲ!ﷺکیا  آپ بھی روتے ہیں؟  آپ ﷺنے ارشاد فرمایا کہ اے عوف کے بیٹے!یہ میرا رونا ایک شفقت کا رونا ہے۔ اس کے بعد پھر دوبارہ جب آپ کی مبارک آنکھوں سے آنسو بہنےلگے  تو آپ کی زبان مبارک پریہ کلمات جاری ہوگئے:اِنَّ الْعَیْنَ تَدْمَعُ وَ الْقَلْبَ یَحْزَنُ وَلَا نَقُوْلُ اِلاَّ مَا یَرْضٰی رَبُّنَا وَاِنَّا بِفِرَاقِکَ یَا اِبْرَاہِیْمُ لَمَحْزُوْنُوْنَ‘‘ آنکھ آنسو بہاتی ہے اور دل غمزدہ ہے مگر ہم وہی بات زبان سے نکالتے ہیں جس سے ہمارا رب خوش ہو جائے اور بلاشبہ اے ابراہیم! ہم تمہاری جدائی سے بہت زیادہ غمگین ہیں۔ (رواه البخاری:1303، مسلم :2315).
اور صحیح مسلم کی روایت میں انس رضی اللہ عنہ کہتے ہیں: والله ما رأيت أحدًا كان أرحم بالعيال من رسول الله صلى الله عليه وسلم (رواه مسلم 2316).  اللہ کی قسم! میں نے اللہ کے رسول ﷺ سے زیادہ اپنے اہل وعیال پر رحم وشفقت کرنے والا کسی اور کو نہیں دیکھا۔
اپنے نواسے حسن اور حسین رضی اللہ عنہما کے ساتھ
ام سلمہ رضی اللہ عنہا بیان کرتی ہیں کہ کہ ایک دن حسن یا حسین رضی اللہ عنہما  آپ کے پیٹ پر بیٹھے ہوئے تھے، انہوں نے آپ کے شکم مبارک پر پیشاب کرنا شروع کردیا، آپ ﷺ نے فرمایا: لا تزرموا ابنِي أو لا تستعجِلوه فتركه حتىقضى بولَه فدعا بماءٍ فصبَّه عليه (مجمع الزوائد: 1/290)
 میرے بیٹے کو پیشاب کرلینے دو۔ جلدی مت کرو، چنانچہ آپ نے اسے چھوڑ دیا حتی کہ پیشاب سے فارغ ہوگیا، پھر اس کے بعد پانی منگوایا اوراس پر چھینٹ مار دی ۔ 
سیدنا ابوہریرہ رضی الله عنہ سے روایت ہے کہ رسول الله صلی اللہ علیہ وسلم حسن بن علی رضی الله عنہما کے لیے اپنی زبان باہر نکالتے، جب بچہ زبان کی سرخی دیکھتا تو وہ خوش ہو جاتا ۔ (السلسلة الصحيحة 1 / 110)
حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اپنے گھر سے نکل کر ہمارے پاس تشریف لائے۔ آپ کے ساتھ حضرت حسن اور حضرت حسین رضی اللہ عنہما بھی تھے، ایک آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے ایک کندھے پر اور دوسرے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے دوسرے کندھے پر تھے۔ اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کبھی اِن سے پیار کرتے اور کبھی اُن سے۔ چنانچہ ایک شخص نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا : اے اللہ کے رسول ! کیا آپ کو ان سے محبت ہے ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا مَن اَحَبَّہُمَا فَقَد اَحَبَّنِی ، وَمَن اَبغَضَہُمَا فَقَد اَبغَضَنِی (الصحيحة: 2895)  جس نے ان سے محبت کی اس نے مجھ سے محبت کی ۔ اور جس نے ان سے بغض رکھا اس نے مجھ سے بغض رکھا ۔ 
ایک موقع سے آپ نے فرمایا ہُمَا رَیحَانَتَایَ مِنَ الدُّنیَا۔  بے شک حسن اور حسین رضی اللہ عنہما  دنیا میں میرے دوپھول ہیں۔ ( صحیح بخاری: 5994)
سنن ابو داود کی روایت ہے حضرت بریدہ رضی اللہ عنہ  کا بیان ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم خطبہ ارشاد فرما رہے تھے کہ اس دوران حضرت حسن اور حضرت حسین رضی اللہ عنہما نمودار ہوئے ، انہوں نے سرخ رنگ کی قمیصیں پہنی ہوئی تھیں اور وہ ان میں بار بار پھسل رہے تھے ۔ چنانچہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم منبر سے نیچے اترے، اپنا خطبہ روک دیا، انہیں اٹھایا اور اپنی گود میں بٹھا لیا ۔پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم انہیں اٹھائے ہوئے منبر پر چڑھے ۔ اس کے بعد فرمایا : اللہ تعالی نے سچ فرمایا ہے کہ

إِنَّمَا أَمْوَالُكُمْ وَأَوْلَادُكُمْ فِتْنَةٌ بے شک تمھارے اموال اور تمھاری اولاد آزمائش ہیں ۔“  میں نے انہیں دیکھا تو مجھ سے رہا نہ جا سکا ۔  پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنا خطبہ مکمل فرمایا ۔ ( سنن ابوداؤد: 1109) عبداللہ بن شداد اپنے باپ سے بیان کرتے ہیں کہ ایک مرتبہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم ظہر یا عصر کی نماز کے لیے تشریف لائے، آپ نے حسن یا حسین رضی اللہ عنھما کو اٹھا رکھا تھا، آپ آگے بڑھے، انہیں انہیں سامنے رکھ دیا اور اور نماز پڑھانے لگے، نماز کے بیچ آپ نے بہت لمبا سجدہ کیا، میں نے سر اٹھایا تو دیکھا کہ بچہ آپ کی پشت مبارک پر ہے، اور آپ سجدے کی حالت میں ہیں،  میں دوبارہ سجدے میں لوٹ گیا، جب رسول ﷺ نماز سے فارغ ہوئے تو لوگوں نے کہا: اے اللہ کے رسول! آپ نے اثنائے نماز بہت لمبا سجدہ کیا۔ حتی کہ ہمیں اندیشہ ہوا کہ کوئی  معاملہ تو پیش نہیں آگیا  یا  آپ پر وحی  تو نازل نہیں ہو رہی ہے؟  آپ نے فرمایا: ایسا کچھ بھی نہیں ہوا، بس میرا نواسا میری گردن پر  بیٹھ گیا تھا، میں نےاسے اپنی ضرورت پوری کرنے سے پہلے ہٹانا مناسب نہیں سمجھا ۔ (سنن النسائی: 1140).

اپنی نواسی امامہ بنت ابوالعاص کے ساتھ :
اللہ کے رسول ﷺ اپنی نواسی  امامہ رضی اللہ عنہا پر جو زینب کی بیٹی تھیں بہت شفقت فرماتے تھے،  بسااوقات اسے لے کر مسجد چلے جاتے، اسے اٹھا کر آپ نماز پڑھتے تھے، جب سجدہ کرتے تو زمین پر بٹھا دیتےاور کھڑے ہوتے تواپنے کندھے پر  اٹھا لیتے تھے۔ (صحیح البخاری:516، صحیح مسلم:542).
صحابہ کے بچوں اور بچیوں کے ساتھ :
بلکہ صحابہ کے بچوں اور بچیوں کے ساتھ بھی آپ بڑی شفقت اور پیار کا معاملہ فرماتے تھے۔ جب صحابہ کے بچے پیدا ہوتے تو وہ آپ کی خدمت میں لاتے تھے، آپ اسے گود میں لیتے، اسے بوسہ دیتے اور اس کے لیے برکت کی دعائیں فرماتے تھے۔ صحیح البخاری کی روایت ہے حضرت ابوموسی اشعری رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ مجھے ایک لڑکا ہوا، میں اسے لے کر اللہ کے رسول ﷺ کی خدمت میں آیا، چنانچہ آپ نے اس کا نام ابراہیم رکھا، کھجور کو چباکر اس کی گھٹی کی، اور اس کے لیے برکت کی دعا فرمائی، پھر میرے حوالے کردیا۔
ام خالد کے ساتھ:
 ام خالد جلیل القدر صحابی خالد بن سعید بن العاص کی بیٹی ہیں، ان کی ولادت سرزمین حبشہ میں ہوئی، جب وہاں سے حضرت خالد رضی اللہ عنہ لوٹ کر آئے توایک دن  آپ کی خدمت میں تشریف لائے،  اپنے ساتھ اپنی بیٹی ام خالد کو بھی لے کرآئے تھے۔ اس بچی  ام خالد کے ساتھ اللہ کے رسول ﷺ نے جومعاملہ کیا اسے خود انہوں نے بیان کیا ہےچنانچہ صحیح البخاری کی روایت ہے ۔ وہ خود فرماتی ہیں: میں اپنے باپ کے ساتھ اللہ کے رسول ﷺ کے پاس آئی، میں نے زرد رنگ کی قمیص زیب تن کر رکھی تھی، آپ ﷺ نے فرمایا: " سِنَهْ سِنَهْ " (حدیث کے راوی) عبداللہ  کہتے ہیں کہ حبشی زبان میں خوبصورت کو " سِنَهْ سِنَهْ "  کہاجاتا ہے۔ وہ کہتی ہیں کہ میں مہر نبوت سے کھیلنے لگی، میرے باپ نے مجھے ڈانٹا، تو اللہ کے رسول ﷺ نے فرمایا: اسے چھوڑ دو، پھر آپ ﷺ نے فرمایا: " أَبْلِي وَأَخْلِقي، ثُمَّ أَبْلِي وأَخْلِقي، ثُمَّ أَبْلِي وَأَخْلِقي ". یہ کپڑا تمہارے بدن پر لمبی مدت تک رہے اور تمہیں لمبی زندگی ملے۔ یہ بات آپ نے تین مرتبہ فرمایا۔ راوی کا بیان ہے کہ وہ ایک عرصہ تک باحیات رہیں۔ (صحیح البخاری: 3071)
جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ کے ساتھ: 
صحیح مسلم کی روایت ہے جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ : جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ :  صليتُ مع رسولِ اللهِ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّمَ صلاةَ الأولى . ثم خرج إلى أهلِه وخرجتُ معَه . فاستقبلَه ولدانٌ . فجعل يمسحُ خدَّيْ أحدهم واحدًا واحدًا . قال : وأما أنا فمسح خدِّي . قال فوجدتُ لِيَدِه بردًا أو ريحًا كأنما أخرجها من جؤنةِ عطارٍ (صحيح مسلم:  2329)
میں نےرسول اللہ ﷺ کے ساتھ  ظہرکی نماز پڑھی، پھر آپ  اپنے گھر تشریف لے جانے لگےتو میں بھی آپ کے ساتھ نکلا، چند بچے آپ کے سامنے آئے، آپ نے ہر بچے کے رخسار پر ہاتھ پھیرا،  میرے رخسار پر بھی ہاتھ پھیرا، میں نے آپ کے ہاتھ میں ایسی ٹھنڈک اور خوشبو محسوس کی گویا عطار کے ڈبے سے آپ نے ہاتھ نکالا ہو۔
ابو عمیر رضی اللہ عنہ کے ساتھ:
بسااوقات آپ ﷺ بچوں سے کھیلتے اور ان سے ہنسی مذاق کرتے تھے: انس رضی اللہ عنہ کے ایک ماں شریک بھائی تھے، ابو عمیر رضی اللہ عنہ، وہ چھوٹے بچے تھے، ان کے پاس ایک پرندہ تھا، جس سے وہ کھیلا کرتے تھے،اچانک وہ پرندہ مر گیا،  انس رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ جب بھی آپ ﷺ ہمارے گھر تشریف لاتے تو فرماتے: «يا أبا عمير، ما فعل النُغير (رواه البخاری:6203، ومسلم: 2150). اے ابو عمیر! تیرے نغیر کا کیا ہوا؟ 

محمود بن الربیع  رضی اللہ عنہ  کے ساتھ:
کبھی کبھار اللہ کے رسول ﷺ بچوں سے  اپنے پیار کا اظہار کرنے کے لیے ان کے منہ پر کلی پھینکتے ۔صحیح البخاری کی روایت ہے ایک مرتبہ اللہ کے رسول ﷺ نے اپنے منہ میں پانی ڈالا اور اپنے منہ سے پانچ سال کے بچے کے منہ پر کلی پھینکا، ایسا آپ نے پیار اور محبت کے اظہار کے لیے کیا۔ یہ صحابی محمود بن الربیع رضی اللہ عنہ ہیں، چنانچہ وہ بڑے ہونے کے بعد لوگوں سے کہا کرتے تھے: عَقَلْتُ من النبيِّ صلَّى اللهُ عليهِ وسلَّم مَجَّةً مَجَّها في وجْهِي، وأنَا ابنُ خمسِ سِنِينَ، من دَلْوٍ .( صحيح البخاري: 77مجھے اچھی طرح سمجھ  ہے کہ اللہ کے نبی ﷺ نے برتن سے پانی لے کر میرے چہرے پر کلی پھینکا تھا جبکہ میں اس وقت پانچ سال کا تھا۔  
بچے کو اس کا حق دیا:
اللہ کے رسول ﷺ کی بچوں پر ایسی شفقت تھی کہ آپ یہ بھی گوارہ نہیں کرتے تھے کہ بچوں کا حق مار کر بڑوں کا خیال کرتے ہوئے ان کو  دے دیا جائے۔ایک مرتبہ کا واقعہ ہے ، سہل بن سعد رضی اللہ عنہ واقعہ کے راوی ہیں ،  اللہ کے رسول ﷺ کے پاس پینے کی کوئی چیز پیش کی گئی۔ آپ نے اس سے نوش فرمایا،  آپ کے دائیں جانب ایک بچہ تھا، اورآٓپ کے بائیں جانب عمر رسیدہ افرادتھے،  آپ ﷺ نے اس بچے سے فرمایا: کیا تم اجازت دیتے ہوکہ میں ان کو (پہلے)  دوں؟ بچے نے کہا: اللہ کی قسم میں آپ کی طرف سے ملے حصے پر کسی اور کو ترجیح نہیں دے سکتا۔ چنانچہ آپ ﷺ نے اس کے ہاتھ میں رکھ دیا۔ (صحیح البخاری:2605، صحیح مسلم:2030). اس حدیث میں اس بات کا اشارہ پایا جاتا ہے کہ اللہ کے رسولﷺ بچوں کا اہتمام کرتے تھے، انہیں ان کا حق دینے کی تاکید کرتے تھےاور اپنا حق حاصل کرنے کے لیے ان میں  جرأت کا جذبہ پیدا کرتے تھے۔
 یہودی لڑکے  کے ساتھ : 
انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ایک یہودی لڑکا آپ ﷺ کی خدمت  کرتا تھا، ایک مرتبہ  وہ بیمار ہوگیا، آپ اس کی تیمارداری کے لیے اس کے گھر تشریف لے گئے، آپ اس کے سر کے پاس بیٹھے، اور فرمایا: اسلام قبول کرلو۔ لڑکا اپنے باپ کی طرف دیکھنے لگا جو اس کے پاس تھا، باپ نے کہا: ابوالقاسم کی بات مان لو۔ چنانچہ اس نے اسلام قبول کرلیا۔اللہ کے نبی ﷺ وہاں سے نکلے تو آپ فرما رہے تھے: «الحمد لله الذي أنقذه من النار» (صحیح البخاری:1356). اللہ کا شکر ہے کہ اس نے میرے ذریعہ اسے جہنم سے بچا لیا۔
 بچیوں کی اہمیت:
زمانہ جاہلیت میں لوگ بچیوں کی پیدائش کو عار سمجھتے تھے، لیکن نبی ﷺ نے بچیوں کو ان کا حق دیا، ان کا احترام کیا، اور ان کی تربیت وتعلیم پر خصوصی انعامات کی بشارت سنائی  بلکہ ان کے حسن تربیت کو جنت میں داخلے کا موجب گردانا۔آپ ﷺ نے فرمایا:
«من عال جاريتين حتى تبلغا، جاء يوم القيامة أنا وهو - وضم أصابعه-» (صحیح مسلم:2631). 
جس نے دو بچیوں کو بلوغت تک پوسا پالا، جب وہ قیامت کے دن آئے گا تو میں اور وہ یوں ہوں گا۔ پھر آپ نے اپنی انگلیوں کو ملایا۔
سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا بیان کرتی ہیں کہ میرے پاس ایک عورت آئی، اس کے ساتھ دو بیٹیاں تھیں، مجھ سے کچھ مانگا، میرے پاس صرف ایک کھجور تھی، میں نے اسے دے دیا، اس نے اسے آدھا آدھا کرکے دونوں بیٹیوں میں بانٹ دیا، اور خود نہ کھائی، پھر کھڑی ہوئی اور چلی گئی، اللہ کے رسول ﷺ جب تشریف لائے تو میں نے ان سے اس کا ذکر کیا، آپ ﷺ نے فرمایا:
من ابتلي من هذه البنات بشيء فأحسن إليهن كن له ستراً من النار  ( صحیح البخاری: 1418، صحیح مسلم: 2629)
جسے ان بیٹیوں کی وجہ سے کسی طریقے سے آزمایا جائے اور وہ ان کے ساتھ اچھا معاملہ کرے تو یہ ( کل قیامت کے دن) جہنم سے پردہ بنیں گی۔

مکمل تحریر >>

استاد الاساتذہ شیخ عبدالسلام مدنی اللہ کو پیارے ھوگئے



 آسماں تیری لحد پر شبنم افشانی کرے 

بڑے ھی رنج وغم کے ساتھ یہ اطلاع دی جارہی ھے کہ جماعت اھل حدیث کی بزرگ ومایہ ناز شخصیت استاد الاساتذہ اور برسوں جامعہ سلفیہ بنارس میں تعلیم ودعوت کے میدان میں بیش بھا خدمات انجام دینے والے ھم سب کے استادشیخ عبدالسلام مدنی ٹکریا ضلع سدھارتھ نگر ایک طویل علالت کے بعد آج بتاریخ 16 جولائی 2018 بروز سوموار شام 5:30 بجے کے قریب عمر کی 74 بھاریں گزار کر اللہ کو پیارے ھوگئے، انا للہ وانا الیہ راجعون اللھم اغفر لہ وارحمہ والھم ذویہ الصبر والسلوان 
موصوف اپنے آبائی وطن ٹکریا نزد ڈمریاگنج ضلع بستی (حال سدھارتھ نگر ) میں 7فروری 1944ء کو پیدا ھوئے، مکتب کی تعلیم کا آغاز گاوں ٹکریا کے مدرسہ مفتاح العلوم میں اور1952ءتا 1960ءدرجہ دوم سے لیکر عربی درجات مشکاۃ جلد 1 تک کی تعلیم جامعہ سراج العلوم بونڈیہار میں ھوئی ،1960 ء میں جامعہ رحمانیہ بنارس تشریف لے گئے اور 1966 ء تک وھاں اساطین اھل علم وفن سے فیضیاب ھوئے اور یھیں سے فراغت ھوئی ۔جامعہ سلفیہ کے تعلیمی افتتاح کے موقع پر شیخ شیبہ الحمد کی سفارش سے مدینہ منورہ میں داخلہ ملا، چنانچہ 1966ء سے لیکے 1970ء تک آپ نے کلیۃ الدعوۃ میں تعلیم حاصل کی اور لیسانس(بی، اے)  کی ڈگری سے سرفراز کئے گئے ۔آپ کے اساتذہ میں مولانا نذیر احمد املوی، شیخ محمد اقبال رحمانی، شیخ محمد عابد رحمانی، شیخ عبدالوحید رحمانی بنارس، شیخ عبدالغفار حسن رحما نی، شیخ عبدالمحسن العباد، ڈاکٹر تقی الدین ھلالی، شیخ محمد امین شنقیطی اور شیخ ابوبکر الجزائری وشیخ ممدوح فخری وغیرہم جیسے اساطین اھل علم اور مشاھیر علماء کے نام شامل ھیں ۔مدینہ منورہ سے فراغت کے بعد 10 دسمبر 1970ء کو جماعت کی مرکزی درسگاہ جامعہ سلفیہ بنارس سے بحیثیت مدرس منسلک ھوگئے اور تعلیم وتدریس، دعوت واصلاح سے بھر پور 43 سال کا ایک طویل عرصہ یھیں گزار دیا اور اس مدت میں ھزاروں شاگردان وتلامذہ کو آپ اپنے علم وعمل کے موتی لٹاتے رھے، اور اپنی علمی صلاحیتوں سے ایک بڑی نسل کو فیض پھونچاتے رھے ۔بالخصوص حدیث کی مشھور کتابیں سنن نسائی صحیح مسلم اور صحیح بخاری پڑھاتے رھے،30 جون 2011ء کو تدریس سے سبکدوش ھوکر آپ اپنے وطن چلے آئے، اور یھیں پر رہ کر تصنیف وتالیف اور دعوت وتبلیغ کا فریضہ انجام دیتے رھے۔آپ کی مشھور تصنیفات میں سنن نسائی جلد 2 کی شرح التعلیق المنتقی اور مشکاۃ کی شرح التعلیق الملیح علی مشکاۃ المصابیح اور دروس حدیث نبویہ وغیرہ ھیں ۔آپ نے اپنے پیچھے ایک بیوہ ( جو آپکے ماموں مولانا خلیل رحمانی مرحوم کی صاحبزادی ھیں )اور5 لڑکے اور5 لڑکیاں چھوڑی ھیں ۔بڑے صاحبزادے عبدالحق ایک بڑے طبیب اور ماھرسرجن ھیں اور دوسرے د۔عبدالنور، عبدالباسط، عبدالظاھر، عبدالواسع ھیں ۔اور سب کے سب تعلیم یافتہ اور برسر روزگار ھیں ۔اللہ تعالی سے دعا ھیکہ مرحوم کو کروٹ کروٹ جنت نصیب فرمائے اور پسماندگان، اھل خانہ، تمام تلامذہ اور پوری جماعت کو صبر جمیل کی توفیق عطافرمائے،
اللھم اغفر لہ وارحمہ واسکنہ الفردوس،
 غمزدہ عبدالحکیم عبدالمعبود المدنی، جامعہ رحمانیہ ممبئی ومرکز تاریخ اھل حدیث ممبئی وبڑھنی بازار سدھارتھ نگر، 16/7/2018


مکمل تحریر >>

ہماری اصل بیماری کیا ہے؟


 ہمارے آقا رحمت دو عالم ﷺ ہماری بھلائی اور خیر خواہی کے ہمیشہ حریص رہتے تھے، دن رات ٓیہی فکر ستا رہی ہوتی کہ کیسے ہماری امت دنیا اور آخرت میں کامیاب ہوجائے، چنانچہ جب وحی اترتی اور کوئی پریشان کن معاملہ ہوتا تو اسی وقت منبر پر چڑھتے اور صحابہ سے خطاب کرتے ہوئے حالات کی نزاکت بیان کرتے تھے۔ ایسا ہی ایک واقعہ اماں عائشہ رضی اللہ عنہا نے بیان کیا ہے، چنانچہ وہ فرماتی ہیں کہ ایک دن اللہ کے رسول ﷺ ہمارے پاس تشریف لائے، میں نے آپ کے چہرے سے بھانپ لیا کہ کوئی خاص بات ضرور ہے، آپ نے وضو کیا، کسی سے کوئی بات نہیں کی اور (گھر سے) نکل گیے، (مسجد گیے) میں نے دیوار سے کان لگا لیا کہ آپ جو کچھ فرمانا چاہتے ہیں اسے سن سکوں۔ آپ منبر پر بیٹھے، اور اللہ تعالی کی حمد وثنا کے بعد فرمایا:

يا أيُّها النَّاسُ إنَّ اللهَ تبارَك تعالى يقولُ لكم: مُرُوابالمعروفِ وانهَوْا عن المنكَرِ قبْلَ أنْ تدعوني فلا أجيبَكم وتسألوني فلا أُعطيَكم وتستنصروني فلا أنصرَكم

  "اے لوگو! اللہ تعالی تمہیں فرماتا ہے کہ بھلائی کا حکم دو اور برائی سے روکو، اس سے پہلے کہ تم دعا کرو اور میں تمہاری دعا قبول نہ کروں، مجھ سے سوال کرو اور میں تمہارا سوال پورا نہ کروں اور تم مجھ سے مدد مانگو اور میں تمہاری مدد نہ کروں"۔
 آپ ﷺ نے اس کے علاوہ اور کچھ نہیں فرمایا اور منبر سے اتر آئے۔ (صحيح ابن حبان: 290)

محترم بھائیو! ذرا تصور کرو کہ آپ ﷺ گھبرائے ہوئے مسجد میں داخل ہوئے تاکہ صحابہ کو خطاب فرمائیں، لیکن آپ نے لمبی چوڑی تقریر نہیں کی بلکہ محض اللہ رب کا ایک پیغام سنا دیا کہ اگر تم بھلائی کا حکم دینا اور برائی سے روکنا چھوڑ دوگے تو تمہارے رب کا دروازہ تمہارے چہرے پر بند کردیا جائے گا، اب تم لاکھ دعا کرو، مانگو، سوال کرو لیکن تمہاری دعا اور سوال پر دھیان نہیں دیا جائے گا اور تمہاری کوئی مدد نہ ہوسکے گی۔ تو بھائیو اور بہنو! ہمیں سمجھ میں آیا کہ ہماری دعائیں قبول کیوں نہیں ہو رہی ہیں اور ہماری اصل بیماری کیا ہے؟




مکمل تحریر >>

وہ بھی گرا نہیں، جو گرا، پھر سنبھل گیا



یہ دھرتی اللہ کی گراں قدر نعمت ہے جس پر ہم رہتے، بستے اور زندگی گذارتے ہیں، اللہ تعالی نے اسے ہمارے تابع اور مسخر کیا اور اس کی تہہ سے مختلف قسم کے خزانے اور نوع بنوع پیداوار نکالے تاکہ وہ ہمارے لیے سامان زیست بن سکیں۔ پھر اسے ہموار بنایا اور اس کے شکم میں کوہساروں کو جمادیا تاکہ ہم اس کی چھاتی پر بآسانی عمارت بنا کر پر لطف زندگی گذار سکیں۔ پھر اس دھرتی پر انسانوں کو خلافت کی ذمہ داری سونپی اور زندگی گذارنے کا سسٹم  دیا تاکہ انسان دھرتی کو اس کے خالق کی مرضی کے مطابق استعمال کرے۔ لیکن جب انسان نے اللہ کے قانون سے منہ موڑا، بغاوت پر اتر آئے اور من مانی کرنے لگے تو اللہ تعالی نے اس دھرتی  کے مکینوں کو طوفان، زلزلوں، گرجدار چینخ، بستیوں کا الٹ دینا، زمین میں دھنسا دینا جیسے آفات بھیج کر دنیا کے لیے نشان عبرت بنا دیا۔ نہ گور سکندر نہ ہے قبر دارا،  مٹے نامیوں کے نشاں کیسے کیسے۔
آج بھی انسان اس دھرتی کے قانون کو پامال کر رہا ہے، اس کے خالق سے لاپرواہی برت رکھی ہے اور دھرتی کو فتنہ و فساد کی آماجگاہ بنا رکھا ہے، جس کی وجہ سے زلزلوں کی کثرت ہے، دن بدن طوفان آرہے ہیں، قتل وخونریزی عام ہے،  گلوبل وارمنگ نے ایسی تباہی مچا رکھی ہے کہ دھرتی پر جینا مشکل ہو رہا ہے، ان دنوں گرمی میں ایسی حدت آئی ہے کہ صرف ہندوستان میں دو ہزار سے زائد لوگ گرمی کی تاب نہ لاکر ہلاک ہوچکے ہیں۔ اوریہ سب  انسانوں کے اپنے اعمال کا نتیجہ ہے، انسان جب نظام الہی  کے ساتھ کھلواڑ کرنے لگتا ہے تو اللہ تعالی کبھی کبھی اس دھرتی کو حکم دیتا ہے کہ حرکت کر،  بھونچال مچادے اور زلزلے پیدا کر، یہ در اصل  الٹی میٹم ہوتا ہے، تنبیہ ہوتی ہے تاکہ انسان سنبھل جائے، سدھر جائے اور اپنے احوال کی اصلاح کرلے، جی ہاں! یہ آفتیں اور بلائیں جہاں اللہ کی نافرمانی، منکرات کے ظہور اور قانوں الہی سے پہلو تہی برتنے کا نتیجہ ہیں تو دوسری طرف قرب قیامت کی نشانی بھی ہیں۔ سچ فرمایا صادق و مصدوق ﷺ نے: 
قیامت قائم نہیں ہوگی یہاں تک کہ علم اٹھا لیا جائے گا، زلزلوں کی کثرت ہوگی، زمانے قریب ہوجائیں گے، فتنوں کا ظہور ہوگا، قتل وغارت گری عام ہوگی اورمال کی بہتات اور فراوانی ہوگی۔ (صحیح البخاری: 1036)
اس حدیث کے تناظر میں جب آپ دنیا کے حالات کا جائزہ لیں گے تو پتہ چلے گا کہ واقعی قیامت قریب ہے کہ آج علم کی کمی پائی جاتی ہے اور جہالت کی بالادستی ہے، زلزلے بکثرت آرہے ہیں،  زمانے سمٹ رہے ہیں اور وقت بہت تیزی سے بھاگ رہا ہے، نت نئے فتنے سر اٹھا رہے ہیں، قتل وخونریزی اس قدر عام ہے کہ گاجر اور مولی کے جیسے انسانوں کو ذبح کیا جا رہا ہے،جانوروں کی قیمت ہے لیکن خون مسلم کی ارزانی ہے۔  اور مال کی بہتات اور فراوانی ایسی ہے کہ اسراف اور فضول خرچی گویا ہماری زندگی کی پہچان بن چکی ہے۔ حقیقت ہے کہ  قیامت کا زمانہ جتنا قریب ہوتا جائے گا مختلف قسم کے فتنے ابھر کر سامنے آئیں گے۔ اور آج ہمارے زمانے  میں یہ فتنے کھل کر سامنے آرہے ہیں جس میں حق کو باطل اور باطل کو حق سمجھا جانے لگا ہے، ظالم کو ظلم سے روکنے اور مظلوم کی مدد کو زیادتی کا نام دیا جاتا ہے۔
جب فتنے سر اٹھا رہے ہوں تو ایسے حالات میں ایک مسلمان کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ اپنے اعمال کا محاسبہ کرے، آج کتنے ایسے لوگ ہیں جو شرک میں مبتلا ہیں، کتنے ایسے لوگ ہیں جو بدعات و خرافات میں پھنسے ہیں، کتنے ایسے لوگ ہیں جو نماز سے غافل ہیں، کتنے ایسے لوگ ہیں جو زنا میں ملوث ہیں، کتنے ایسے لوگ ہیں جو فحاشی کے رسیا، سودی کاروبار کے دلدادہ اور رشوت کے لین دین میں پیش پیش ہیں۔ کیا ایسے لوگ اللہ کے عذاب سے بے خوف ہو گئے ہیں کہ اس کا عذاب اچانک ان پر رات کے وقت آجائے جب کہ وہ نیند میں مست خرام ہوں؟ یا دن میں آ پڑے جب کہ وہ کھیل کود اور موج مستی میں لگے ہوئے؟ جولوگ الٹی میٹم پانے کے باوجود اللہ کی طرف نہیں لپکتے تو اللہ تعالی کے ہاں ایسے لوگوں کی ہلاکت یقینی ہوجاتی ہے۔
 اسی طرح فتنوں کی بالادستی میں ہماری ذمہ داری بنتی ہے کہ دین پر ثبات قدمی کے وسائل کو پیش نظر رکھیں جن کی بدولت اپنے ایمان کی حفاظت کر سکتے ہیں۔ ابھی رمضان کا مبارک مہینہ ہمارے سروں پر سایہ فگن ہے، رحمت، مغفرت، جہنم سے آزادی اور ہمدردی و غم خواری کا تحفہ لیے ہوئے رمضان المبارک کا مہینہ دھوم دھام سے آیا ہے، وہ مہینہ کے جس کے لیے عرش سے فرش تک اہتمام ہوتا ہے، وہ مہینہ جو روحانی کائنات کا موسم بہار ہے۔ ہم کس قدر خوش قسمت ہیں کہ یہ موسم بہار ایک بار پھر ہماری زندگی میں عود کر آیا ہے۔ تو آئیے اس ماہ مبارک کا خیر وخوبی سے استقبال کیجیے، اس کے ایک ایک لمحے سے فائدہ اٹھائیے ،  توبہ و استغفار ،انابت الی اللہ ،نالہ نیم شبی  کے ذریعہ اپنے رب کو راضی کیجیے۔ اللہ ہم سب کو اس کی توفیق بخشے آمین۔

صفات عالم محمد زبیر تیمی    


مکمل تحریر >>